November 7th, 2018 / 5:30 AM

چشمِ کم سے دیکھتا ہے کیوں مِری چشمِ پُر آب

تیرے دل کی برف نے دیکھا نہیں ہے آفتاب

یوں گزرتی جا رہی ہے زندگی کی دوپہر

دل میں اک امیدِ کاذب اور آنکھوں میں سراب

خود سَری اُس تُند خو کی جاتے جاتے جائے گی

ایک ہی دن میں کبھی آتا نہیں ہے انقلاب

تم نے ہم کو کیا دیا اور ہم سے تم کو کیا مِلا

مِل گئی فرصت کبھی تو یہ بھی کر لیں گے حساب

ہم کو اپنا شہر یاد آتا نہ شاید اِس قدر

کیا کریں رہتا ہے تیرے شہر کا موسم خراب

ایک خط لکھ کر سمجھنا فرض پورا ہو گیا

واہ باصرِؔ جی تمہارا بھی نہیں کوئی جواب