January 25th, 2018 / 09:15 AM / Karachi

تشنگی بے سبب نہیں ہوتی

مے کشی بے سبب نہی  ہوتی

 

محتسب خود بھی اس کا قائل ہے

زندگی بے سبب نہیں ہوتی

 

دوستی بھی کبھی رہی ہوگی

دشمنی بے سبب نہیں ہوتی

 

گھر جلا ہے یا دل جلا ہے کوئی

روشنی بے سبب نہیں ہوتی 

 

دخل ہوتا ہے کچھ نظر کو بھی

دلکشی بے سبب نہیں ہوتی

 

کسی طوفان کی آمد آمد ہے

خامشی بے سبب نہیں ہوتی

 

کیا کسی کے ہو منتظر محسن

بے کلی بے سبب نہیں ہوتی