March 11, 2005 / 04:11 PM  / Anarkali Cafe

کاش میں تیرے بن گوش میں بندا ہوتا 

رات کو بے خبری میں جو مچل جاتا میں 
تو ترے کان سے چپ چاپ نکل جاتا میں 

صبح کو گرتے تری زلفوں سے جب باسی پھول 
میرے کھو جانے پہ ہوتا ترا دل کتنا ملول 

تو مجھے ڈھونڈھتی کس شوق سے گھبراہٹ میں 
اپنے مہکے ہوئے بستر کی ہر اک سلوٹ میں 

جوں ہی کرتیں تری نرم انگلیاں محسوس مجھے 
ملتا اس گوش کا پھر گوشۂ مانوس مجھے 

کان سے تو مجھے ہرگز نہ اتارا کرتی 
تو کبھی میری جدائی نہ گوارا کرتی 

یوں تری قربت رنگیں کے نشے میں مدہوش 
عمر بھر رہتا مری جاں میں ترا حلقہ بگوش 

کاش میں تیرے بن گوش میں بندا ہوتا